کار و بار

پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں مثبت رجحان

کاروباری ہفتے کے چوتھے روز پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں کاروبار میں مثبت رجحان دیکھا گیا۔ کاروبارکے دوران 100 انڈیکس میں 773 پوائنٹس کا اضافہ ہوا۔ دوران کاروبار 100 انڈیکس 44 ہزار 726 پوائنٹس پر ٹریڈ کرتے دیکھا گیا۔

دوسری جانب انٹر بینک میں پاکستانی کرنسی کے مقابلے میں امریکی ڈالر 22 ماہ کی کم ترین سطح پر آ گیا۔

ملکی معیشت میں بہتری اور کرنٹ اکاونٹ خسارے میں کمی کے بعد ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر مزید مستحکم ہوگئی۔

انٹربینک میں ڈالر کی قدر میں 23 پیسے کمی ہوئی جس کے بعد انٹربینک میں ڈالر 153.18 سے کم ہو کر 152.95 روپے کا ہو گیا۔ جو 22 ماہ کی کم ترین سطح ہے۔

فاریکس ڈیلرز کا کہنا ہے کہ کورونا وبا کے باوجود ملکی معیشت میں بہتری اور کرنٹ اکاونٹ خسارے میں کمی کے بعد ڈالر کی قدر میں گراوٹ کا سلسلہ جاری ہے۔

ماہر معاشیات مزمل اسلم نے ڈالر کی گراوٹ اور روپے کی قدر میں بہتری کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ ڈالر کی گراوٹ کی سب سے بڑی وجہ عالمی مالیاتی ادارے (آئی ایم ایف) کا پروگرام بحال ہونا ہے اس پروگرام کی مد میں پاکستان کو مزید 50 کروڑ ڈالرز ملیں گے۔

مزمل اسلم کا کہنا تھا کہ ڈالر کی زیادہ آمد کی وجہ سے روپے کی قدر میں اضافہ ہو رہا ہے اور روپے کی قدر بڑھنے سے معیشت پر مثبت اثرات مرتب ہوں گے۔


subscribe YT Channel


Source

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button