کار و بار

کابینہ نے بھارت سے چینی اور کپاس درآمد کرنے کی تجویز مسترد کردی

کابینہ کا اجلاس وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت ہوا۔ اجلاس میں بھارت سے کپاس اور چینی منگوانے کا معاملہ زیر بحث آیا ہے۔اقتصادی رابطہ کمیٹی(ای سی سی) نے گزشتہ روز بھارت سے کپاس اور چینی  منگوانے کی تجویز پیش کی تھی۔ ای سی سی نے قیمیت کم ہونے پر بھارت سے درآمد کرنے کی تجویز پیش کی تھی۔

کابینہ نے بھارت سے کپاس منگوانے کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں موجود وسائل سے ہی ضروریات پوری کی جائیں۔

گزشتہ روز اقتصادی رابطہ کمیٹی نے بھارت سے چینی، کپاس اور سوتی دھاگہ منگوانے کی اجازت دی تھی۔  اجلاس میں 30 جون 2021 تک بھارت سے  درآمد کی منظوری دی گئی۔

کمیٹی نے نجی شعبے کو بھارت سے چینی درآمد کرنے کی بھی اجازت دی تھی۔

حکومتی ذرائع کا کہنا ہے کہ پاکستان کو کمی پورا کرنےکے لیےکپاس درآمد کرنی پڑے گی۔ بھارت سے کپاس اور دھاگے کی درآمد سستی پڑے گی۔

پاکستان میں کپاس کی سالانہ کھپت ایک کروڑ 20 لاکھ سے ڈیڑھ کروڑ گانٹھیں ہیں۔ اس سال کپاس کی پیداوار میں تاریخی کمی کا تخمینہ ہے۔ خیال رہےکہ پاکستان نے اگست 2019 میں بھارت کے ساتھ دوطرفہ تجارت کو معطل کر دیا تھا۔


subscribe YT Channel


Source

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

ADVERTISEMENT
Back to top button